بھارت کی ریاستی دہشت گردی :پاکستان نے اقوام متحدہ سے بڑا مطالبہ کردیا

بھارت کی ریاستی دہشت گردی :پاکستان نے اقوام متحدہ سے بڑا مطالبہ کردیا

پاکستان نے اقوام متحدہ سے مطالبہ کیا ہے کہ مقبوضہ کشمیر میں بھارت کی جانب سے ماورائے عدالت قتل عام،پھانسیوںاورانسانی حقوق کی پامالیوں کی تحقیقات کی جائیں،آسیہ اندرابی سمیت بھارتی جیلوں میںسیاسی قیدیوں اور انسانی حقوق رہنماؤں کو رہا کرائے جائے ۔ نجی ٹی وی کے مطابق ترجمان دفتر خارجہ کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ آسیہ اندرابی سمیت دیگر رہنماؤں کی قید کا مقصد بذریعہ بربریت کشمیر پر قبضے کو طول دینا ہے،ہندوستان نے جان بوجھ کر مقدمے کی سماعت تیز کی، عدل پامال کیا، بھارت نے آسیہ اندرابی پر

جھوٹے الزامات کے تحت مقدمہ قائم کر رکھا ہے،آسیہ اندرابی سمیت دیگر رہنماؤں کی قید کا مقصد بذریعہ بربریت کشمیر پر قبضے کو طول دینا ہے، دفتر خارجہ نے کہا کہ آسیہ اندرابی مسلسل 15 سال سے غیر قانونی اور غیر انسانی قید و بند کا شکار ہیں، تنظیم نے ہندوستانی قابض فورسز کے ہاتھوں جنسی تشدد اور بدسلوکی کے خلاف مہم شروع کی،آسیہ اندرابی 4 دہائیوں تک مقبوضہ کشمیر میں معاشرتی اصلاحات کیلئے سرگرم رہیں، جیل میں آسیہ اندرابی کی زندگی کو شدید خطرات لاحق ہیں، اقوام متحدہ ماورائے عدالت قتل عام، پھانسیوں، انسانی حقوق پامالیوں کی تحقیقات کرے۔ دفتر خارجہ کے مطابق اقوام متحدہ سیکریٹری جنرل، ہائی کمشنر برائے انسانی حقوق جنیوا سے رابطہ کیا گیا اورمطالبات کیے کہ اقوام متحدہ انسانی حقوق کمیشن کی سفارشات کی روشنی میں تحقیقات کی جائیں،اقوام متحدہ انسانی حقوق کمیشن کی 2رپورٹس کی روشنی میں تحقیقاتی کمیشن قائم کیا جائے،امقبوضہ کشمیر میں رائج تمام کالے قوانین ختم کیے جائیں،سیاسی قیدیوں اور انسانی حقوق رہنماؤں کو رہا کیا جائے۔پاکستان نے کہا کہ اقوام متحدہ تمام الزامات، جھوٹے مقدمات ختم کرنے میں کردار ادا کرے، بھارت، آسیہ اندرابی، ان کے شوہر، ساتھیوں کے خلاف تمام من گھڑت الزامات ختم کرے،بھارت کی بدنام زمانہ تہاڑ جیل میں قید آسیہ اندرابی کو فوری رہا کیا جائے۔ترجمان دفترخارجہ نے کہا کہ بھارت مسلسل بین الاقوامی انسانی حقوق اور قانون کی دھجیاں بکھیر رہا ہےاورانڈیا، اقوام متحدہ چارٹر، سلامتی کونسل، جنرل اسمبلی قراردادوں کی خلاف ورزی کر رہا ہے۔انہوں نے کہاکہ بھارت، کشمیری جدوجہد کو دہشت گردی کا رنگ دینے کی کوشش کر رہا ہے،یہ بھارتی طرز عمل بدنیتی پر مبنی، عدالتی قتل کے مترادف ہے۔

Comments are closed.